Mystery Of Mary Celeste In Urdu

دنیا کا پُراسرار ترین بحری جہاز میری سیلیسٹ

’میری سیلیسٹ‘ تاریخ کے پردوں میں چھپا شاید دنیا کا پراسرار ترین بحری جہاز ہے۔ یہ جہاز 4 دسمبر 1872 کو بحر اوقیانوس میں بھٹکتا ہوا پایا گیا۔ جہاز پر ہر چیز بالکل صحیح سلامت تھی، لیکن کسی انسان کا کوئی نام و نشان نہیں تھا۔ تاریخ کی یہ پراسرار ترین گتھی آج تک سلجھائی نہیں جا سکی ہے۔

1. معروف برطانوی قلم نگار سر آرتھر کانن ڈائل نے جب 1894 میں اس جہاز کے بارے میں کتاب لکھی تو انہوں نے Mary کو Mari لکھا۔ تب سے آج تک اس جہاز کے نام کو غلط اسپیلنگ کے ساتھ لکھا جا رہا ہے۔

2. میری سیلیسٹ ایک امریکی دو مَستُولی مُرَبَع بادبانی جَہاز تھا؛ جسے شروع میں ’امیزن‘ کا نام دیا گیا؛ مگر 1868 میں یہ نام ’میری سیلیسٹ‘ سے تبدیل کر دیا گیا۔

3. آج تک کوئی نہیں جانتا کہ اس جہاز کا نام کیوں تبدیل کیا گیا تھا۔ ایک رائے کے مطابق اس جہاز کا نیا نام گلیلیو کی ایک نا جائز مگر ذہین ترین بیٹی کے نام پر رکھا گیا۔

4. اس کے جہاز کے ساتھ کیا ماجرا پیش آیا کوئی نہیں جانتا؛ مگر اسباب میں بغاوت اور قذاقی سے لے کر انشورنس فراڈ تک کے دعوے کیے گئے ہیں۔

5. بعض لوگوں کا کہنا ہے کہ اس جہاز پر کسی بہت عظیم الجثہ مچھلی نما جانور (squid) نے حملہ کیا تھا۔ بعض دیگر نے ان اسباب میں زیر زمین زلزلے، ما بعد الطبیعات طاقتوں (پراسرار طاقتوں) اور حتیٰ کہ خلائی مخلوق تک کو شامل کیا ہے۔

6. اگر میری سیلیسٹ کے نام میں شامل حروف کو صنعتِ مقلوب (anagram)کے تحت آگے پیچھے کیا جائے؛ تو یہ جملہ وجود میں آتا ہے: ایل مچھلی سے ملو Meet scary eel|

7. اس جہاز کا کپتان بنجمن برگس ایک راسخ العقیدہ عیسائی تھا۔

8. جہاز کی لاگ بک میں آخری اندراج اس کے ملنے سے 10 روز قبل کیا گیا تھا۔ جہاز سے جان بچانے والی کشی غائب تھی۔

9. آج تک اس جہاز کے عملے اور کپتان کا کوئی سراغ نہیں ملا۔ کپتان برگس کے ساتھ اس کی بیوی اور بیٹی بھی لا پتہ ہوئیں جو جہاز پر سوار تھیں۔

10. 1885 میں اس جہاز کے نئے کپتان نے انشورنس کمپنی کو دھوکا دینے کے لیے اسے جان بوجھ کر تباہ کرنے کی کوشش کی۔


میری سیلیسٹ کے بارے میں مفصل مضمون جلد آ رہا ہے صرف نیرنگ پر